WhatsApp Image 2024-04-15 at 3.45.27 PM

Share this article

Facebook
Twitter
LinkedIn

جمہوریت کی بنیادوں پر استوار قومیں اپنے مضبوط جمہوری روایت کے ذریعے امن، خوشحالی، اور عدل کی بہترین مثال بنتی ہیں۔ ووٹ کا حق اس جمہوریت کا جوہر ہے، جو عوام کی آواز کو اقتدار تک پہنچاتا ہے اور ایک زندہ جمہوریت کی پہچان ہوتا ہے۔ پاکستان میں انتخابی نظام مہنگا، غیر موثر، اور پرانی ٹیکنالوجی پر مبنی ہے، جو ووٹ کی رازداری اور شفافیت کو برقرار رکھنے میں مشکلات پیدا کرتا ہے۔ اس کے برعکس، بلاکچین ٹیکنالوجی پر مبنی ووٹنگ سسٹم شفافیت، تحفظ، اور کارکردگی کو بہتر بنا سکتا ہے۔ بلاکچین کی مضبوطی ڈیٹا میں تبدیلی یا مداخلت سے تحفظ فراہم کرتی ہے، جو اسے ووٹنگ کے لیے ایک مثالی ٹیکنالوجی بناتی ہے۔ اس سسٹم کی تعمیر اور دیکھ بھال آسان ہونے کے ساتھ، عوام کا اس نظام پر اعتماد بھی بڑھے گا، جس سے پاکستان دنیا کے بہترین انتخابی نظام کی طرف بڑھ سکتا ہے۔

پاکستان کے سامنے بلاکچین ٹیکنالوجی کے ذریعے ووٹنگ کے عمل کو زیادہ سہولت بخش بنانے کا بے نظیر موقع ہے۔ تصور کریں کہ آپ اپنے موبائل فون سے ہی آرام سے ووٹ دے سکیں، بغیر کسی پیچیدگی کے، بغیر لمبی قطاروں میں انتظار کیے۔ اس سہولت کی بدولت، ووٹنگ کی شرح میں نمایاں اضافہ ہو سکتا ہے کیونکہ ہر شہری بغیر کسی جسمانی یا وقتی رکاوٹ کے، اپنے جمہوری حق کا استعمال کر سکے گا۔ مزید برآں، بلاکچین کی ٹیکنالوجی کی بدولت ووٹنگ کے فوری نتائج دیکھنا ممکن ہو جائے گا، جو نہ صرف وقت کی بچت کرے گا بلکہ شفافیت اور جمہوریت کے تعیئن سے عوام کے اعتماد کو بھی مضبوط کرے گا۔ اس طرح، بلاکچین پر مبنی ووٹنگ سسٹم نہ صرف ووٹنگ کے عمل کو آسان بنا دے گا بلکہ یہ ایک جدید، محفوظ، اور شفاف جمہوریت کی طرف ایک قدم ہوگا جہاں ہر شہری کا ووٹ اہمیت رکھتا ہے اور فوری طور پر اس کی گنتی ہوتی ہے-

بلاکچین پر مبنی ووٹنگ نظام ووٹروں کی  شرح میں اضافے کا باعث بنے گی، جس سے جمہوریت کو مزید تقویت ملے گی۔ یہ نہ صرف انتخابی فراڈ اور ووٹ کی چوری کو ختم کر دے گا بلکہ انتخابی عمل کی شفافیت اور عوامی اعتماد کو بھی بحال کرے گا ۔ نوجوان نسل، جو  ٹیکنالوجی اور جدت کو سراہتی ہے، اس نظام کو اپنانے میں پیش پیش ہو سکتی ہے، جو پاکستان کو ایک جمہوری، خوشحال، اور ترقی یافتہ ملک بنانے کی راہ میں ان کی اہم بھومکا کو ظاہر کرتی ہے۔بلاکچین ٹیکنالوجی کی بدولت، پاکستان کی نئی نسل کے پاس اپنے ملک کے جمہوری عمل کو نئی جہتوں تک پہنچانے کا ایک منفرد موقع ہے۔ اس سے انتخابی عمل میں نہ صرف زیادہ شفافیت آئے گی بلکہ یہ عوام کو بھی زیادہ موثر طور پر اپنے حقوق استعمال کرنے کی طرف مائل کرے گا۔

خواتین کی ووٹنگ میں شرکت ایک اہم پہلو ہے، جو اکثر سماجی، ثقافتی، اور عملی رکاوٹوں کی وجہ سے متاثر ہوتی ہے۔ فزیکل ووٹنگ کے لیے موجودہ نظام میں خواتین کو کئی دکتوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے، جیسے کہ سماجی دباؤ، نقل و حرکت میں مشکلات، اور ووٹنگ سینٹرز تک رسائی میں دشواری۔ بلاکچین ٹیکنالوجی پر مبنی ووٹنگ سسٹم اس مسئلے کا حل پیش کرتا ہے، کیونکہ خواتین اپنے موبائل فون کے ذریعے آسانی سے اور بغیر کسی رکاوٹ کے اپنا ووٹ دے سکیں گی۔ اس سے نہ صرف خواتین کی ووٹنگ میں شمولیت کا اضافہ ہوگا بلکہ یہ جمہوری عمل میں ان کی برابری اور  بھرپور حصہ داری کو بھی فروغ دے گا۔ بلاکچین کے استعمال سے، ہم ایک ایسے معاشرے کی جانب گامزن ہوسکتے ہیں جہاں ہر فرد، بغیر کسی جنسی، ثقافتی یا عملی رکاوٹ کے، اپنے جمہوری حقوق کا مکمل استعمال کر سکے۔

موبائل کنیکٹوٹی کے بارے میں عام تاثر یہ ہے کہ پاکستان میں اسکی شرح کم ہے، لیکن حقیقت میں ملک میں 190 ملین سے زیادہ موبائل کنیکشنز ہیں، جن میں سے 60% سمارٹ فونز ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ تقریباً 120 ملین سمارٹ فون ایپ یوزرز ہیں، جو کہ مجموعی ووٹر الیکٹوریٹ کے تقریباً 120 ملین افراد کے برابر ہے۔ ان افراد کے لیے جن کے پاس سمارٹ فونز نہیں ہیں بلکہ انالوگ فونز  ہیں، ہم  متنی یا صوتی اختیارات کا استعمال کر سکتے ہیں۔ بہت دور دراز علاقوں کے لیے، جہاں موبائل کی رسائی یا موجودگی نہیں ہے، وہاں فزیکل پولنگ سٹیشنز کو بھی متوازی طور پر چلایا جا سکتا ہے، جن کے ووٹوں کو آنے کے ساتھ ہی شامل کیا جا سکتا ہے۔ اس طرح، ہم ایک جامع اور موثر انتخابی نظام کی طرف قدم بڑھا سکتے ہیں جو تمام پاکستانیوں کو ان کے جمہوری حقوق کے استعمال میں سہولت فراہم کرتا ہے، بغیر کسی جغرافیائی یا ٹیکنالوجیکل رکاوٹ کے۔

انتخابی عمل پر آنے والی لاگت ایک اہم تشویش کا موضوع ہے۔ آخری انتخابات کی مجموعی لاگت تقریباً 50 ارب روپے تھی، جو کہ ایک بہت بڑی رقم ہے۔ اس کے مقابلے میں، ایک بلاکچین بیسڈ ووٹنگ سسٹم کو محض 500 ملین روپے سے بھی کم  میں تشکیل دیا جا سکتا ہے۔ یہ نہ صرف محفوظ اور اعلیٰ معیار کا ہوگا بلکہ اس کے چلانے کی لاگت بھی نہایت ارزاں ہوگی، جو کہ ملک کے لیے بڑی بچت کا باعث بنے گی۔ اس سے نہ صرف انتخابی عمل کو مزید موثر بنایا جا سکتا ہے بلکہ یہ پاکستان کے وسائل کو بہتر طریقے سے استعمال کرنے کی طرف بھی ایک قدم ہوگا۔ اس طرح، بلاکچین ٹیکنالوجی کا استعمال نہ صرف جمہوری عمل کو مزید شفاف اور سہولت بخش بنا سکتا ہے بلکہ یہ ایک معاشی اور موثر حل بھی پیش کرتا ہے، جو کہ ملک کی مالی صحت کے لیے بہتر ثابت ہوگا۔

 انتخابی عمل کی جدت کے ذریعہ، ہم ایک ایسے مستقبل کی بنیاد رکھ سکتے ہیں جہاں پاکستان ایک جمہوری قوت کے طور پر ابھر کر سامنے آسکتا ہے،  جس کی بنیاد مضبوط اور شفاف جمہوری اصولوں پر مشتمل ہو۔بلاکچین ٹیکنالوجی کے استعمال سے جمہوریت کو نئی بلندیوں تک لے جانے کا خواب نہ صرف عوام کے دلوں میں جاگزیں ہوتا ہے بلکہ یہ پاکستان کے روشن مستقبل کیلۓ ایک اہم قدم ہوگا۔.  چنانچه  بلاکچین کا استعمال پاکستان کو جمہوریت اور ٹیکنالوجی کے امتزاج کے ذریعے ایک مثالی قوم بننے کی راہ ہموار کرےگا  جہاں ہر شہری کی راۓ اور اس کے ووٹ کی اہمیت یکساں ہوگی۔

Dr Usman W. Chohan is Advisor (Economic Affairs and National Development) at the Centre for Aerospace & Security Studies, Islamabad, Pakistan. He can be reached at cass.thinkers@casstt.com . 

Recent Publications

Browse through the list of recent publications.

18th Lok Sabha Polls: Islamophobia and Electoral Partisanship

The Indian political horizon is in a frenzy with the ongoing 18th Lok Sabha polls. Voting for the multi-phase elections started on 19th April  and will span over six weeks, with results scheduled to be announced on 4th June. This election is primarily between the two main alliances: Narendra Modi’s BJP-led National Democratic Alliance (NDA) and Congress-led 28-party opposition alliance, Indian National Developmental Inclusive Alliance (INDIA).

13 views

Read More »

East or West? Who Will Rule the 5th Industrial Revolution?  

The world economy saw a ‘great divergence’ as a result of the first two Industrial Revolutions (IR-1 and IR-2) between 1750 and 1950 AD. The economic shift occurred from East to West as a result of industrial development by Western European nations led by Great Britain. The key to their success was the use of then-new technologies like steam power, mechanisation, automobiles, railways, telegraphs or electricity at every level of industrialisation

34 views

Read More »

Indigenisation of Drones: A Security Imperative for Pakistan

For any state, it is of paramount importance how it guarantees national security. This can be ensured through the use or threat of use of force and also mobilising its defence sector in times of conflict and war. In other words, it revolves around the defence capabilities that allow a state to carry out fundamental functions including ‘preventing, deterring, coercing and countering national security threats’.

70 views

Read More »

Stay Connected

Follow and Subscribe

Join Our Newsletter
And get notified everytime we publish new content.

© 2022 CASSTT ALL RIGHTS RESERVED

Developed By Team CASSTT

Contact CASS

CASS (Centre for Aerospace & Security Studies), Old Airport Road, Islamabad
+92 51 5405011
cass.thinkers@casstt.com
career@casstt.com

All views and opinions expressed or implied are those of the authors/speakers/internal and external scholars and should not be construed as carrying the official sanction of CASS.